سابق صدر ممنون حسین علالت کے باعث انتقال کر گئے

کراچی: سابق صدر پاکستان ممنون حسین طویل علالت کے بعد انتقال کر گئے۔

سابق صدر مملکت ممنون حسین علالت کے باعث انتقال کر گئے۔ ممنون حسین کے انتقال کی تصدیق ان کے بیٹے ارسلان ممنون نے کی۔

سابق صدر کے بیٹے ارسلان ممنون کا کہنا ہے کہ ممنون حسین دو ہفتوں سے نجی اسپتال میں زیر علاج تھے اور وہ کینسر کے عارضے میں مبتلا تھے۔

ممنون حسین پاکستان مسلم لیگ ن کے سینیئر رہنماؤں میں سے ایک تھے اور وہ 2013 سے 2018 تک صدر مملکت رہے۔ ممنون حسین مُلک کے 12 ویں صدر رہے اور اس کے علاوہ وہ گورنر سندھ بھی رہے تھے۔

اظہار تعزیت

گورنر سندھ عمران اسماعیل نے سابق صدر ممنون حسین کے انتقال پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالی ان کی مغفرت فرمائے اورمرحوم کے اہل خانہ کو صبر جمیل عطا فرمائے۔ چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے بھی سابق صدر کے انتقال پر اظہار افسوس کا اظہار کیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینیٹر فیصل جاوید خان نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں کہا کہ اللہ تعالی سابق صدر پاکستان ممنون حسین کی مغفرت فرمائے اور ان کے اہل خانہ اور عزیز و اقارب کو صبر جمیل عطا فرمائے۔

پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن لیڈراور مسلم لیگ (ن) کے رہنما حمزہ شہباز نے سابق صدر کے انتقال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ پارٹی کا بہت بڑا اثاثہ تھے اللہ تعالی ان کی مغفرت فرمائے اور ان کو جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائے اور ان کے اہل خانہ کو بھی صبر جمیل عطا فرمائے۔

ممنون حسین 1940ء میں بھارت کے شہر آگرہ میں پیدا ہوئے تھے ۔ قیام پاکستان کے بعد ان کا خاندان نقل مکانی کر کے پاکستان آ گیا تھا۔ سابق صدر نے انسٹی ٹیوٹ آف بزنس ایڈمنسٹریشن کراچی سے گریجویٹ کی ڈگری حاصل کی تھی۔

1993 میں جب پاکستان کے سابق صدر غلام اسحاق خان نے نواز شریف کی حکومت برطرف کی تو ان دنوں ہی ممنون حسین شریف برادران کے قریب پہنچے اور بعد میں وہ مسلم لیگ سندھ کے قائم مقام صدر سمیت دیگر عہدوں پر فائز رہے۔ ممنون حسین 1997 میں سندھ کے وزیر اعلیٰ لیاقت جتوئی کے مشیر رہے جبکہ 1999 میں انہیں گورنر مقرر کیا گیا مگر صرف چھ ماہ بعد ہی نواز شریف کی حکومت کا تخہ الٹ گیا اور وہ معزول ہو گئے۔

بشکریہ(نیو نیوز)

Source

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں